بھیونڈ ی میں بیسواں کل ہند اردو کتاب میلہ جاری

بھیونڈی ۱۹؍ دسمبر بروز پیر ۔قومی کو نسل برائے فروغِ اردو زبان نئی د ہلی اور کو کن مسلم ایجو کیشن سو سائٹی ، بھیونڈی کے زیر اہتمام قو می اردو کتاب میلہ کے تیسرے دن ثقافتی پروگرام کے تحت الامت اردو ہا ئی اسکول ، بھیونڈی کی میز بانی میں جی ایم مومن کا لج آ ڈیٹوریم میںایک مذاکرہ منعقد کیا گیا۔حضرت مولاناابو ظفر حسا ن ندوی کی صدارت میں ’’اردو زبان کے فروغ میں مدارس کا کردار‘‘کے عنوان سے منعقد مذا کرے میں مولانا حلیم اللہ قاسمی، مولانا خالد جمیل مکی، مولانا سید اطہر علی ،مولانا عبدالبرا ثری ، مولانا علی اصغر حیدری،مولانا عبدالمعید ، مولانا عابد اقبال ، مولانا شاہد خان اور جناب عبدالرشید طا ہر مومن صاحب نے اس اہم مذ ا کرے میں حصہ لیا۔پروگرام میں محمد شفیع مقری (سو سائٹی کے اہم رکن اور چیئر من)، مخلص مد عو (اسسٹنٹ ہیڈ ماسٹر )عبدالعزیز انصاری (وائس پرنسپل)، بلال احمد مو من، ملک مومن اور عما ئدین نے شہر نے شرکت کی۔مذ ا کرے کا آ غاز تلا وت کلا م پا ک اور اس کے تر جمے سے ہو ا بعد ازاں حمد و نعت پیش کی گئیں۔ مہما نو ں کی گلپو شی کی رسم الامت ایجوکیشن سوسائٹی کے جنرل سیکریٹری ریاض طاہرکے ذریعے ادا کی گئی ۔ مذا کر ے کے آغاز میں قو می کو نسل گی نما ئندگی کر تے ہو ئے میلہ میں منعقد ثقا فتی و ادبی پروگرام کے انچا ر ج شعیب رضا فا طمی نے اردو زبان و ادب کے فرو غ میں مدا رس کے تا ر یخی کر دار پر روشنی ڈالی اور تمام شر کاء کا قو می کونسل کی جا نب سے استقبال کیا۔ ریاض طاہر نے پروگرام کے اغراض و مقاصد بیان کیے ۔تمام مقررین نے دیے گئے عنوان پر سیر حاصل گفتگو کی ۔سیماب انور نے نظامت کا فریضہ انجام دیا ۔رسم ِ شکریہ پر پروگرام کا اختتام ہوا۔
۱۹دسمبر بروز پیر کو ثقافتی پروگرام کے سلسلے کا دوسرا پرو گرام دو پہر تین بجے شروع ہو ا جس کا عنوان تھا ’’ اردو میں ادب ِ اطفال‘‘ اس پرو گرام کی صدارت بچوں کے معروف ادیب سلام بن رزاق نے کی جبکہ نظامت کے فرائض رفیق گلاب نے کی روایت کے مطابق سب سے پہلے مذاکرے میں شریک ادیبوں کی گل پو شی کی گئی اور پھر اصغر حسین قریشی نے تمام مہمانوں کا تعارف پیش کیا۔ اس اہم اجلاس میں شریک بچوں کے ادیب جناب عطا الرحمن طارق ، جناب ذوہیر صیفی، ڈاکٹر فاطمہ ہارون، محترمہ فرزانہ شاہد ، جناب خیال انصای اور ملک مومن کے علاوہ کوکن مسلم ایجوکیشن سوسائٹی کے اعزازی جنرل سیکریٹری ڈاکٹر مصدق پٹیل قومی کونسل کے ثقافتی پروگراموں کے انچارج شعیب رضا فاطمی اور شفیع مقری بھی موجود تھے ۔ اس پروگرام کو ترتیب دینے کا کام تکمیل رائٹر س گروپ نے انجام دیا ۔ مقالہ نگاروں نے مجموعے طور پر بچوں کے ادب کو ایک ضروری عنصر قرار دیا اور اس خیال کا بار بار اظہار کیا گیاکہ بچوں کے ادب کا فروغ ہی دراصل اردو ادب کے فروغ کی بنیاد ہے لہٰذا موجودہ دور میں جب اردو کے بڑے ادیب بچوں کا ادب لکھنے سے پر ہیز کر تے ہیں انہین چاہیے کہ بچوں کے ادب پر خاص زو ر دیں ۔تاکہ بچے بڑے ہو کر بروں کے ادب بھی پڑ ھ سکے بہت بڑی تعداد بچوں کے رسائل کا اجرا بھی ضروری ہے ساتھ ہی ان رسائل میں موجو دہ حالات کے پیش نظر معاشرے سے ہم آہنگ کہانیوں کا شامل ہونا بھی ضروری ہے ۔پروگرام میں دو کتابوں کا اجرا ء بھی عمل میں آیا۔
واضح ہو کہ گزشتہ شام ۶؍ بجے کل ہند اردو کتاب میلہ ۲۰۱۶ میں الحمد ہائی اسکول اینڈ جونیر کالج بھیونڈی کی جانب سے ایک خصوصی پروگرام ’’ شامِ غزل ‘‘ منعقد کیا گیا۔ وقت مقررہ سے قبل ہی رئیس ہائی اسکول گراونڈ سامعین سے کھچا کھچ پر ہو گیا جس میں طالبات اور خواتین کی بڑی تعداد شریک ہوئی۔ مہمانانِ کرام میں ارتضیٰ کرییم(ڈائریکٹر قومی کاونسل) ، ان کی اہلیہ، اسلم فقیہ( صدرِ سوسائٹی)، محمد شفیع مقری چیرمین رئیس ہائی اسکول وجونئیر کالج، شاہد لطیف مدیر روزنامہ انقلاب ڈاکٹر نیاز اعظمی، ڈاکٹر ریحان انصاری، ڈاکٹر مطیع اللہ اور ملک مومن شریک ہوئے۔
پروگرام کے آغاز میں طالبات نے الحمد اسکول کا ترانہ پیش کیا۔ بعد ازاں میلے کے انچارج جناب شعیب رضا فاطمی نے اپنی مختصر مگر جامع تقریر میں تمام مہمانوں، الحمد اسکول کے عہدیداران و اراکین، اساتذ ہ، طلبہ ، ، سامعین اور غزل سنگروں کا پرتپاک خیر مقدم کیا۔بعد ازاں اسمیتا بلور ، رحمان علی، سہیل انصاری جیسے غزل سنگر اور رابعہ گرلز ہائی اسکول و جونیر کالج کی طالبہ ضیا کوثر نے اپنی مسحور کن آوازوں سے ایک سماں باندھ دیا۔ اسمیتا بلور نے ایک حمد، منقبت اور سیماب اکبرآبادی اور فیض احمد فیض کی غزلیں پیش کیں ۔ بالخصوص ضیا کوثر نے اپنی مترنم آوازسے سامعین کو مسحور کر دیا۔ رحمان علی نے ’’مولا اے مولا‘‘ گیت گایا جسے سامعین نے سر اہا ۔ سہیل انصاری کے ذریعہ پیش کی گئی  غزل کو بھی لوگوں نے بے حدپسند کیا۔
اس پروگرام میں جناب ریاض الدین خان  سیکریٹری ،الحمدایجوکیشن سوسائٹی  نے پروفیسرارتضیٰ کریم کو شال و پھول پیش کیا۔ان کے ساتھ ، عبدلعزیز انصاری چیرمین الحمد ہائی اسکول بھی موجو د تھے  ، اسلم فقیہ، محمد شفیع مقری، شاہد لطیف، امتیاز خلیل اورعرفان جعفری کوبھی گلہائے تحسین اور شال پیش کیے گئے ۔  پروگرام کے دوران ہی ڈاکٹر ساجد صدیقی کی منفرد موضوع پر تحریر کردہ کتاب’’ بھگوت گیتا ، قرآن کی روشنی میںـــ‘‘ کا اجرا بھی بدست ڈائرکٹر ا رتضیٰ کریم اور جناب اسلم فقیہ عمل میں آیا۔
یہ شام غزل اتنی کامیاب رہی کہ اسے برسوں یاد رکھا جائے گا۔ پروگرام کی نظامت عرفان جعفری اور محمد رضا نے مشترکہ طور پر انجام دیا۔ رسم شکریہ کے ساتھ پرو گرام کا اختتام ہوا۔
Please follow and like us:
0

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Facebook Auto Publish Powered By : XYZScripts.com