الیکشن کمیشن کی تجاویز

الیکشن کمیشن کی تجاویز

ہندستان میں چناؤ اور سیاسی صورت حال کے پیش نظر ان دنوں الیکشن کمیشن نے تجویز پیش کی ہے کہ ملک میں سنگین جرائم میں ملوث افراد کو انتخابات میں حصہ لینے سے روکا جانا چاہئے ۔ اس تعلق سے کمیشن نے سپریم کورٹ میں حلف نامہ داخل کیا ہے اور کہا ہے کہ جن افراد کے خلاف ایسے مقدمات درج ہیں جن میں پانچ سال قید کی سزا ہوسکتی ہے تو انہیں انتخابات میں مقابلہ کرنے سے روکا جانا چاہئے ، کیونکہ یہ مقدمات سنگین نوعیت کے ہوتے ہیں۔ اس سلسلہ میںمرکزی حکومت کو قوانین بنانے چاہئیں اور موجودہ قوانین میں ترامیم کرنے کی بھی ضرورت ہے ۔
الیکشن کمیشن کی اس تجویز سے ہو سکتا ہے ملک کے عوام متفق ہوں ،مگر ضروری نہیں کہ سیاسی جماعتیں بھی متفق ہوں ۔ الیکشن کمیشن نے ۱۹۹۸؍ سے انتخابی اصلاحات کی تجاویز پیش کرنی شروع کی تھیں، مگر اب تک ان تجاویز کو عملی شکل دینے کی کوشش نہیں کی گئی، نہ ہی اس تعلق سے سیاسی جماعتوں نے سنجیدگی کا اظہارکیا ، اس کی وجہ ظاہر ہے ۔
جس وقت ٹی این سیشن چیف الیکشن کمشنر بنے تھے، انہوں نےسیاست کو جرائم پیشہ افراد سے پاک رکھنے کےلیے کئی اور تجاویز بھی پیش کی تھیں۔اسی کے ساتھ انہوں نے امیدواروں کے انتخابی اخراجات پر پابندی عائد کی تھی ۔ان کے علاوہ بھی مختلف الیکشن کمشنران کی جانب سے سیاست کو جرائم پیشہ افراد سے پاک کرنے کے کئی تجاویز حکومتوں کو روانہ کی گئیں لیکن کسی بھی حکومت نے ان تجاویز کو منظوری نہیں دی ۔
۲۰۱۶؍میں ایک بار پھر حکومت کو اس طرح کی تجاویز روانہ کی گئیں لیکن ان پر بھی موجودہ حکومت نے بھی کوئی توجہ نہیں دی۔دراصل اس تعلق سے ملک کی کوئی بھی سیاسی جماعت سنجیدگی کا اظہار نہیں کرتی ہے ۔ یہ کلیہ نہیں ہے ، مگر پھر بھی جرائم پیشہ افراد اپنی طاقت اور دھونس کے بل پر انتخابات میں کامیابی حاصل کر لیتے ہیں ، اس کے بعد وہ وہی کرتے ہیں ، جو ان کی مرضی ہوتی ہے ۔ ملک میں انتخابی مہم کو شفاف بنانے کے لیے الیکشن کمشنر کی تجاویز پر غور کرنے اور عمل کرنے کی ضرورت ہے ۔آج بھی کئی ایسے افراد ہیں ، جن پر مقدمات چل رہے ہیں اور وہ مختلف سیاسی پارٹیوں میں بڑے عہدوں پر ہیں ۔ اکثر یہ بھی ہوتا ہے کہ جرائم پیشہ افراد سیاسی پارٹیوں کی سرپرستی حاصل کر لیتے ہیں یا پھر سیاسی پارٹیاں انہیں اپنی طاقت سمجھ لیتی ہیں ۔ الیکشن کمشنر کی تجاویز کے مطابق عمل کیا جائے ، تو ہو سکتا ہے ، کچھ بہتر تبدیلی آ سکتی ہے ۔بہتر تبدیلی کے تعلق سے صرف باتیں ہوتی ہیں ، عمل نہیں۔

Please follow and like us:
0

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Facebook Auto Publish Powered By : XYZScripts.com