گھپلوں پر وزیر اعظم کی پر اسرار خاموشی؟

 گھپلوں پر وزیر اعظم کی پر اسرار خاموشی؟

ان دنوں ہندستان میں کئی گھوٹالے اور گھپلے منظر عام پر آئے ہیں ،معاشی بدعنوانی اور خرد برد کے معاملات پر بحث چل رہی ہے ۔
چند مٹھی بھر عناصر نے عوامی بینکوں کا ہزاروں کروڑ روپیہ لوٹ لیا اور خاموشی سے ملک بھی چھوڑ دیا اس کے باوجود حکومت کی جانب سے محض ضابطہ کی تکمیل کی کارروائی ہو رہی ہے۔
لوٹی ہوئی دولت کو واپس لانے کا نہ کوئی طریقہ نظر آ رہا ہے اور نہ ہی کوشش کی جا رہی ہے ۔ان معاملات پر وزیر اعظم نریندر مودی کی پر اسرار خاموشی کو بھی نظر انداز نہیں کیا جا سکتا ۔
وہ بینکوں کے صفایہ کے معاملات پر بات کرنے کے بجائے اپوزیشن کا صفایا کرنےکی بات کرتے ہیں ۔
سچ تو یہ ہے کہ انہوں نے ۲۰۱۴؍کےعام انتخابات سے قبل اس ملک کو بد عنوانی سے پاک کرنے کا اعلان کیا تھا، مگر بدعنوانی کا صفایہ ہونے کے بجائے بد عنوانی کے ذریعے بینکوں کا صفایہ کرنے کا پروگرام زیادہ کامیاب رہا ۔
وجئے مالیا ، للت مودی اور نیروا مودی ہزاروں کروڑ روپئے لوٹ کر ملک سے فرار ہوگئے۔نروا مودی نے سوئیٹزر لینڈ میں وزیر اعظم نریند رمودی کے ساتھ ایک میٹنگ میں بھی شرکت کی ۔
رافیل معاملات پر بھی نریندر مودی خاموش ہیں جبکہ ان کی وزیر دفا ع وقتاً فوقتاً متضاد بیانات دے رہی ہیں ؟
وزیر اعظم نریندر مودی نے گزشتہ لوک سبھا انتخابات سے قبل یہ وعدہ کیا تھا کہ وہ بیرونی ممالک میں رکھا گیا کالا دھن ہندستان واپس لائیں گے ، مگرایسا نہیں ہو سکا بلکہ ہندستانی عوام کےسرکاری بینکوں میں جمع رقموں کو دھوکہ باز بیرونی ممالک میں منتقل کرکے خود بھی فرار ہو رہے ہیں۔
سرکاری بینک عوام کی دولت کے تحفظ کے لیے ہوتے ہیں،مگر اب دھوکہ باز افراد سرکاری بینکوں کو لوٹ رہے ہیں۔یہ منظم اور منصوبہ بند لوٹ کا ایک طریقہ ہے۔
وزیر اعظم اور ملک کے وزیر فائنانس کو ان گھپلوں کے تعلق سے عوام کو جواب دینا چاہئے۔ ان معاملات پر وزیر اعظم نریندر مودی کی پر اسرا خاموشی پر سوالیہ نشان لگتا ہے ؟

Please follow and like us:
0

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Facebook Auto Publish Powered By : XYZScripts.com